Saturday , 20 January 2018
بریکنگ نیوز
خطوط

خطوط

مکرمی و محترمی ایڈیٹر صاحب
السلام علیکم
پہلی دفعہ آپ کی بزم میں شامل ہورہی ہوں۔ عرصہ دراز سے سوچتی رہی کہ اس پسندیدہ رسالے کے بارے میں کچھ کہوں مگر ہمت نہیں ہورہی تھی۔آج ہمت کر کے’’ وقارِ ہند‘‘ کے بارے میں اپنے خیالات کوسپردِ قلم کررہی ہوں۔یقین جانیئے’’ وقارِ ہند‘‘ ہمارے گھر کا پسندیدہ میگزین ہے ایک ماہ ختم ہونے تک بڑی بے صبری سے اسکا انتظار رہتا ہے۔ پندرہ روزہ’ ’ وقارِ ہند‘‘ ہی ضروری ہے۔ تمام مضامین کا معیار قابل تعریف ہے۔ ابنِ صفی کی تحریر’’ کالی تصویر‘‘ جو اُدھوری رہ چکی ہے اس کی اشاعت دوبارہ کی جائے تو عین نوازش ہوگی۔ میں تقریباً پچھلے پانچ سالوں سے’’ وقارِ ہند‘‘ کا مطالعہ کررہی ہوں ۔پہلی دفعہ جب میں نے اس میگزین کا مطالعہ کیا تب میں نہم جماعت کی طالبہ تھی اور اب میں ڈگری(بی ایس سی سال دوم) کی طالبہ ہوں۔ امید ہیکہ اللہ آپ کو بہترین کامیابی عطا کرے اور یہ میگزین مسلم معاشرے میں انقلاب کا سبب بنے ۔
جویریہ تقدیس‘کنوٹ‘ضلع ناندیڑ
ڈیر ایڈیٹر صاحب
السلام علیکم
ماہ اکتوبر کا’’ وقارِ ہند‘‘ نظروں سے گذرا اور دل کو چھو گیا‘ تمام مضامین بہت اچھے تھے۔ ماہنامہ نے اُردو صحافت کے معیار کو کافی اونچا کردیا ہے اور دیدہ زیب پرنٹنگ دیکھ کر دل خوش ہوگیا۔ مضمون’’ ہندوستان‘پاکستان سے ہتھیار کی نہیں سفارتی جنگ کرے گا‘‘ پڑھ کر بہت اچھا لگا۔ضرورت اس بات کی ہے کہ حیدرآباد شہر سے متعلق مواد ہر ماہ شائع کریں جیسے حیدرآباد میں ہونیوالی مخصوص تقاریب کی جگہ اور وقت‘حیدرآباد سے جہازوں کی آمد و رفت کے اوقات‘ ریل گاڑیوں کے اوقات‘ اہم ریاستی اور قومی محکموں کے ٹیلیفون نمبرات شائع کریں اس سے لوگوں میں آگاہی ہوتی رہے گی۔ اس کے علاوہ میری آپ سے گذارش ہے کہ ماہانہ’’ کوئیز‘‘ کی انعام کی رقم میں اضافہ کریں پہلا انعام ایک ہزار روپے کردیں کیونکہ روپے کی قدر دن بہ دن کم ہوتی جارہی ہے۔ ہم آپکے ای میل کے ذریعہ ان پیج پر ٹائپ کر کے مضمون روانہ کر نے کے خواہاں ہیں۔ میں امید کرتا ہوں کہ میری گذارش پر غور کیا جائیگا۔ ماہنامہ’’وقارِ ہند‘‘ کے اگلے شمارے کا انتظار رہے گا۔
سید نثار مہدی‘سلیم نگر کالونی
جناب محترم ایڈیٹر صاحب
آداب۔’’وقارِ ہند‘‘ کا تازہ شمارہ ایک بار پھر مکمل رعنائیوں کے ساتھ شائع ہو کر منظر عام پر آچکا ہے۔ موجودہ حالات کے اہم موضوع کو ٹائٹل پیج بنانا بہت اچھی علامت ہے۔ سرورق بہت اچھا لگا ۔ خصوصی رپورٹ کے علاوہ سیاسیاست اور دیگر گوشوں کے مضامین د ل کو بھا گئے۔’’ وقارِ ہند‘‘ ایک معیاری اور فکری میگزین ہے مجھے قوی امید ہے کہ مستقبل قریب میں یہ میگزین سماجی اصلاح کا نقیب بنے گا۔ جسارت کے ساتھ یہ بات کہنا چاہتا ہوں کہ اس پسندیدہ میگزین کو ماہنامہ کی شکل دینا میری دانست میں مناسب عمل نہیں تھا اسے پندرہ روزہ ہی رکھنا بہتر تھا کیونکہ اُردو دُنیا میں ماہنامہ رسائل اور جرائد کی بہتات ہے۔ پندرہ روزہ فیملی میگزین کی ضرورت عرصہ دراز سے محسوس کی جارہی تھی اس خلاء کو’’ وقارِ ہند‘‘ نے کامیابی کے ساتھ پُر بھی کرلیامگر اس پسندیدہ میگزین کو دوبارہ ماہنامہ شکل دینے کی صورت میں پندرہ روزہ کی جگہ پھر خالی ہوگئی ہے۔ تمام مضامین معیاری‘دلچسپ اور معلوماتی رہے۔
عبد الصمد عادل‘صنعت نگر
مدیر اعلیٰ’’ وقارِ ہند‘‘آداب
اکتوبر کا ’’ وقارِہند‘‘ تاخیر سے ملامگر اس رسالہ میں آپ نے ادبی صفحات بڑھا کر ہم لوگوں کی دلی خواہش کو پورا کردیا اس کیلئے ہم شکر گذار ہیں۔ تینوں افسانے بہت پسند آئے اور غزلیات بھی بہتر رہے۔ اسلامیات میں معرکہ کربلا کا مضمون اور فضلیت سے ہمکنار ہوئے۔ جناب عقیل رحمن وقارؔ کی تصویر اور اُن کا مضمون بھی مبارکباد کا مستحق ہے۔ جناب وقارؔ خلیل صاحب مرحوم کا ’’ سلام‘‘ اور تصویر بھی دیکھ چکے ہیں۔مگر آپ کی تصویر دیکھنے کے متمنی ہیں کیونکہ’’ اداریہ‘‘ ہمیشہ لاجواب رہتا ہے۔قیمت کے اعتبار سے’’ وقارِہند‘‘ کا’’ وقار‘‘ ہے جو کہ کتابت کی غلطیوں سے پاک ہے۔آج کل میں اور میری سہلیاں وقفہ‘وفقہ سے ’’وقارِہند‘‘ کا مطالعہ کرتی ہیں۔اللہ آپ تمام صاحب حضرات جو کے اس میگزین سے جڑے ہیں انہیں صحت یابی دے تا کہ یہ میگزین یونہی کامیابی سے خوب سے خوب تر نکلے۔
شاذیہ بیگم‘کامٹی
ڈیر ایڈیٹر صاحب آداب!’’ وقارِ ہند‘‘ کا نیا شمارہ ایک بار پھر میرے ہاتھوں میں ہے۔ سرورق کو بے انتہا دیدہ زیب پایا۔ سیاسیات کے مضامین کو غیر جانبدار اور معیاری پایا۔ ٹرمپ کی ماڈل بیوی کے موضوع کا مضمون‘ امریکی تہذیب کی عکاسی کرتا ہے۔ دلچسپ دُنیا حسب معمول دلچسپ رہی۔رشید انصاری نے اپنے قلم سے حقائق کو منظر عام پر ایک بار پھر لایا ہے ان کا انداز اسلوب نہایت کھرا اور سچ بولتا ہے۔میوات کے شرمناک واقعہ سے ایک بار پھر انسانیت شرمسار ہوئی ہے۔زانیوں کو سزا نہ ملنے پر اس طرح کے واقعات پیش آتے رہیں گے اور صنف نازک کی عصمت تار تار ہوتی رہے گی۔پاکستان نامہ بھی اچھا لگا۔ میری خواہش ہے کہ’’ وقارِ ہند‘‘ میں پاکستان نامہ مستقل کا لم شروع کیا جائے۔خصوصی رپورٹ کو حقائق پر مبنی پایا۔ اسلامیات کے مضامین بھی پسند آئے۔
انصار بیگ‘پٹنہ بہار
مکرمی ایڈیٹر ‘’’ وقارِ ہند‘‘ السلام علیکم
میں‘’’ وقارِ ہند‘‘ کا قدیم قاری ہوں۔ ابتداء سے ہی’’ وقارِ ہند‘‘ زیر مطالعہ رہا ہے۔اس کا ہر شمارہ نئی معلومات کے ساتھ جلوہ گر ہوتا ہے۔ نیا شمارہ ہر لحاظ سے کامیاب اور معیاری رہا ہے۔سیر و سیاحت اور تاریخ کا سلسلہ اچھا ہے اس کو ہر لحاظ سے جاری و ساری رکھنے کی ضرورت ہے۔ صحت کے گوشہ میں حکیم صاحب کے مشورے اور انتباہ اچھا لگتا ہے۔ حکیم صاحب وقتاً فوقتاً صحت کے بارے میں بتاتے رہتے ہیں اللہ‘ انہیں صحت کے ساتھ عمر دراز کرے اور ان کی مشکلات کو دور کرے۔ اسلامیات کے مضامین معلوماتی اور معیاری تھے۔ یہ مضامین ایک دستاویزی ہیں جنہیں کبھی بھی پڑھا جاسکتا ہے اور ان پر عمل کیا جاسکتا ہے۔ شکیل رشید کا مضمون دل کو تڑپا دیا۔فرقہ پرست فڈنویس کی حکومت نے منظم انداز میں مسلم نوجوانوں کو ہراساں کرنے کے اپنے خفیہ منصوبہ پر عمل درآمدشروع کردیا ہے۔ قوم کی ترقی ان بد معاشوں کو دیکھی نہیں جاسکتی اسلئے مسلم نوجوانوں کی پکڑ دھکڑ شروع کی گئی ہے ۔اللہ سے دعا ہے کہ مسلمانوں کی جان ومال کی حفاظت فرمائے(آمین)
سید شجاع الدین‘گلبرگہ۔کرناٹک

Comments

comments