Thursday , 13 December 2018
بریکنگ نیوز
Home » بین الاقوامی » آفریقہ » 100 کی عمر دینے والا گاؤں
100 کی عمر دینے والا گاؤں

100 کی عمر دینے والا گاؤں

چین کے ایک گاؤں میں دنیا کے سب سے زیادہ بزرگ لوگ رہتے ہیں. یہاں 200 افراد ایسے ہیں جو عمر کی سنچری لگا چکے ہیں. کیسے ہوتی ہے ان کی عمر اتنی لمبی آئیے جانیں.

چین کے اس گاؤں میں رہنے والے ایک شخص نے خانہ جنگی، خشک سالی سے لے کر کئی واقعات دیکھی ہے. اس گاؤں میں رہنے والے کچھ لوگ ایک دم غربت سے متاثرہ گھروں میں رہتے ہیں اور وہ بھی معمولی کمائی پر لیکن یہ دنیا کے سب سے زیادہ عمر لوگوں میں شامل ہیں.
چین کا چگماي گاؤں ہینان علاقے کا ہے جہاں بہت سے دیہات میں سنتروں کی کاشت ہوتی ہے. یہاں دنیا کے سب سے زیادہ کاشت کاری لوگ رہتے ہیں. 5،60،00 کی آبادی میں یہاں 200 لوگوں نے پوری صدی دیکھی ہے.
اتنا ہی نہیں ان میں سے کم از کم تین سپر بزرگ ہیں، یعنی ایسے لوگ جن کی عمر 110 سال یا اس سے زیادہ ہو گئی ہے. دنیا بھر میں ایسے صرف 400 لوگ ہیں.
لی اج کے ریسڈنس پرمٹ میں دیکھا جا سکتا ہے کہ وہ 1900 میں پیدا ہوئیں. جہاں وہ اپنے بچپن سے اب تک سیمنٹ کے کمرے میں رہتی ہیں اور اپنے فارم ہاؤس پر بطخوں کو دیکھتی ہیں. جب افسران انہیں لنگےوٹي مشہور شخصیت یعنی طویل عمر کے لئے اوارڈ دینے پہنچے تو مچمچاتي آنکھوں والی لی اج نے پوچھا کہ یہ کون لوگ ہیں. ان کے اہل خانہ نے بتایا کہ اب یہ تمغہ ان کے گھر کی ایک بینچ پر لٹکا ہوا ہے. اس تمغے کے ساتھ انہیں ہر ماہ 500 یوآن اور مفت طبی سہولت دی گئی ہے.

ایسے ہی لمبی عمر لوگ کیوبا، یونان کے جزیرے، کوسٹا ریکا کے جزیرہ نما اور جاپان کے کچھ علاقوں میں بھی رہتے ہیں.

کیوں اور کیسے
سائنسی اب یہ پتہ لگانے کی کوشش کر رہے ہیں کہ دنیا کے مختلف حصے میں رہنے والے ان لوگوں کے طویل زندگی کا راز کیا ہے. وہ اس کے لئے خاندان، محنت، اور سبز طرز کی زندگی پر توجہ رہے ہیں.
جہاں چین نے جاپانی حملے، خانہ جنگی میں کمیونسٹوں کی جیت سے لے کر ملازم معیشت سے مارکیٹ اکنامی تک کئی تبدیلی دیکھ چکا ہے. وہیں چگماي کی زندگی میں کوئی تبدیلی نہیں آیا. وہ لوگ وہی کر رہے ہیں جو پہلے کرتے تھے،.
86 سال کے وانگ كال کہتے ہیں، “میں نے کھیتی کے علاوہ کوئی ورزش نہیں کی ہے. وہ بھی باقی لوگوں کی طرح اپنی بیوی و اهے کے ساتھ سادہ گھر میں رہتے ہیں.” انہوں نے بتایا کہ دوسری عالمی جنگ میں جاپان کے ہتھیار ڈالنے کے ایک دن بعد انہوں نے شادی کی تھی، 68 سال پہلے.

کیا ہے راز
بڑھاپے پر تحقیق کرنے والوں کا کہنا ہے کہ طویل عمر کے پیچھے کئی وجوہات ہیں. امریکی سوشل سائنس ریسرچ کونسل کا ایک مہم ہے جو چین کے ماحول اور صحت پر تحقیق کر رہا ہے. اس ادارے کی جینیفر هولڈوے نے کہا کہ پوری معیشت کاشت کے ارد گرد ہے. “ارد گرد صنعت نہیں ہیں، ماحولیاتی سسٹم اچھا ہے، جسمانی ورزش ہوتی رہتی ہے. خاندان صحت مند ہیں. خوب پھل اور سبزیاں دستیاب ہیں. مٹی میں ضروری غذائی عنصر موجود ہیں.”

تاہم مقامی لوگوں کا کہنا ہے کہ ہلکی سی شراب اس میں اہم کردار ادا کرتی ہے. شو يوهے 104 سال کی ہیں. وہ کہتی ہیں کہ ہر روز وہ تین كوكونٹ موسم بہار کے پیگ لیتی ہیں. 80 سال کی شینگ شی بتاتی ہیں، “میں ہر شام کو شراب پیتی ہوں، بالکل تھوڑی سی. اس سے گرم رہنے میں مدد ملتی ہے. شی کے 31 بچے اور نواسی پوتے اور پڑپوتے ہیں.
ماہرین کا کہنا ہے کہ فعال سماجی زندگی سے بھی زندگی طویل ہوتی ہے. چےگماي میں اس کی کوئی کمی نہیں. شام ڈھلے اکثر لوگ تاش کھیلنے اور باتیں کرتے مل جائیں گے. اتنا ہی نہیں وہ ساتھ بیٹھ کر اوپیرا بھی سنتے ہیں. شی کہتی ہیں، “میں یہاں ہر صبح ورزش کرکے آتی ہوں. اوپیرا دیکھتی ہوں اور چائے پیتی ہوں.”

چےگماي کی کمیونسٹ پارٹی کمیٹی نے ان لوگوں پر ایک تحقیق شروع کی ہے. اس تحقیق کے مطابق، ان “لوگوں کا مستعد، سادہ زندگی تو طویل عمر کا سبب ہے ہی، ساتھ ہی سبزی کھانا، جلدی سونا جلدی اٹھنا بھی اس سے منسلک ہے.”
چین نے اپنے یہاں کے طویل عمر کے لوگوں کے بارے میں گانوں میں شامل کیا ہے اور خود کو لمبی عمر کا مرکز بنا کر پیش کر رہے ہیں.
منافع بنانے والی کمپنیوں نے ہینان کی کافی فائدہ اٹھایا ہے اور امید کر رہی ہیں کہ آنے والے دنوں میں یہ چین کے ریٹائرڈ لوگوں کی گرم جگہ بن جائے گی. لنگوٹي شہر نام کی ایک عمارت بھی اس اشتہار کا حصہ ہے. لیکن چےگماي نے بوڑھے لوگوں کی صحت پر سرمایہ کاری بند کر دیا ہے.
113 سال کی لی اج کی پڑپوتي یی میئ کے پاس اس کا آسان جواب ہے، “ہم نے ان سے (پڑدادي) ایک بار پوچھا تھا. انہوں نے کہا کہ کہ وہ مونگ پھلی کے تیل بہت کھاتا ہیں اس لئے وہ اتنی بڑی ہیں. یہ ان کی راز ہے. “

Comments

comments