Thursday , 16 August 2018
بریکنگ نیوز
Home » حسن و صحت » موسم کی عام بیماریوں سے بھی بچیں
موسم کی عام بیماریوں سے بھی بچیں

موسم کی عام بیماریوں سے بھی بچیں

موسم نے انگڑائی لی ہے۔سردیاں رخصت ہوچکی ہیں اور گرمیاں دستک دے چکی ہیں اس گرمی کے موسم میں بھی کئی امراض وبائی شکل اختیار کرسکتے ہیں۔ ضروری نہیں کہ ہر صحتمند‘ان امراض کا شکار ہو بلکہ احتیاطی تدابیر اختیار کرتے ہوئے خود اور بچوں کو ان امراض سے بچائے رکھ سکتے ہیں۔
گرمی کے ابتدائی دنوں میں خسرہ جیسے کنکر پتھر بھی کہتے ہیں‘پھیل سکتا ہے۔ اس وبا سے بچے شکار ہوتے ہیں۔ یہ ایک قسم کے وائرس سے پھیلتی ہے۔ یہ وائرس‘حلق کو متاثر کرسکتے ہیں ۔ اسلئے بچوں کو خسرہ کے ٹیکے لگائے جاتے ہیں۔آشوب چشم بھی متعدی مرض ہے اس کا عموماً بڑے لوگ شکار ہوتے ہیں۔گوبری‘بچوں کی بیماری ہے جو وبائی شکل اختیار کرسکتی ہے۔ چیچک بڑوں اور بچوں دونوں کو ہوتی ہے۔ ہندوستان میں اب اس مرض پر مکمل طور پر قابو پالیا گیا ہے۔ اس موسم میں جلد پرسراخ دانے نمودار ہوتے ہیں یہ ایک عام مرض ہے جو گرمی کے دنوں میں بچوں اور بڑوں کو پریشان کر رکھتا ہے پسینہ سے انفکشن شدید ہوتا ہے اور کھجلی ہوتی ہے۔ کھجانے سے انفکشن شدید ہوجاتا ہے۔ لمس یا گلے میں سوجن یا ورم غدود کی شکایت بھی اس موسم میں ہوتی ہے یہ ایک خطرناک وائرس سے پھیلتی ہے۔ یہ بیماری‘ایک سے دوسرے کو لگتی ہے۔ یرقان اور ٹائفائیڈ سے بچے اور بڑے متاثر ہوتے ہیں جو ناقص پانی اور غذا کے استعمال سے یہ دو بیماریاں پھیلتی ہیں۔ ٹائفائیڈ جسم کی توانائی کو ختم کرنیوالا مرض ہے۔یہ بیکٹریا کے ذریعہ پھیلتا ہے یہ بیکٹریا‘آلودہ پانی اورغیر معیاری غذاؤں میں پایا جاتا ہے کھانسی اور فلو بھی اس موسم میں لاحق ہوتا ہے۔ٹھنڈے پانی سے کھانسی اور فلو کی شکایت لاحق ہوسکتی ہے۔ ٹھنڈے پانی اور مشروبات سے گریز کریں۔غیر معیاری اور مقامی کمپنیوں کے آئسکریم کھانے سے گریز کریں کیونکہ پتہ نہیں کہ ان آئسکریم کی تیاری کیلئے کونسا پانی استعمال کیا گیا ہے‘کولڈ سافٹ ڈرنگس کے استعمال کو ترک کردیں۔

Comments

comments